0

یورپی یونین نے COP28 فوسل فیول کے معاہدے کو روکنے کی اوپیک کی کوششوں کی مذمت

یوروپی یونین کے موسمیاتی سربراہ (climate chief)نے ہفتے کے روز اوپیک OPEC کی طرف سے فوسل فیول کو مرحلہ وار ختم کرنے سے متعلق COP28 معاہدے پر سخت تنقید کی۔اور
آئل پروڈیوسرز کلب ممالک کے اس اقدام کو “غیر مددگار” اور “آؤٹ آف ہیک”out of whack قرار دیا۔
دبئی میں اقوام متحدہ کے COP28 موسمیاتی سربراہی اجلاس کے لیے تقریباً 200 ممالک کا اجلاس ہو رہا ہے جو اس بات پر بحث کر رہے ہیں کہ آیا پہلی بار اتفاق کیا جائے کہ دنیا کے فوسل فیول کے استعمال کو ختم کیا جائے؟، جو موسمیاتی تبدیلی کی بنیادی وجہ ہے۔
اس وقت کم از کم 80 ممالک بشمول 27 رکنی یورپی یونین، ریاستہائے متحدہ اور آب و ہوا کے خطرے سے دوچار جزیرے ممالک فوسل فیول کو مرحلہ وار ختم کرنے کے لیے COP28 معاہدے کا مطالبہ کر رہے ہیں.
یاد رہے کہ دنیا بھر میں شدید موسمیاتی تغیر دیکھنے میں آ رہےہیں اور سائنس دان موسمیاتی تبدیلی کے بدترین اثرات سے بچنے کے لیے ایسے اقدام پر زور دے رہیں ہیں۔

COP28 کے مبصرین اور مذاکرات کاروں نے کہا کہ سعودی عرب اور روس سمیت OPEC اور OPEC+ کے اراکین ممالک – COP28 میں فوسل فیول فیز آؤٹ ڈیل کے سخت ترین مخالف رہے ہیں۔
کوئلہ، تیل اور گیس عالمی گرین ہاؤس گیسوں کے اخراج میں 75 فیصد سے زیادہ حصہ دار ہیں، جو کہ مہلک گرمی، خشک سالی اور سمندر کی بڑھتی ہوئی سطح سمیت ماحولیاتی اثرات کو بڑھا رہے ہیں۔

فوسل فیول جدید زندگی کے انجن کے طور پر کام کر رہا ہے، اور اقوام متحدہ کے موسمیاتی مذاکرات میں ترقی پذیر ممالک فوسل فیول کی جگہ صاف توانائی (clean energy)میں سرمایہ کاری کرنے کے لیے بہت زیادہ مالی امداد کا مطالبہ کر رہے ہیں۔
اس وقت تک فوسل فیول دنیا کی تقریباً 80% توانائی پیدا کرتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں